رنجش ہی سہی دل ہی دکھانے کے لیے آ

آ پھر سے مجھے چھوڑ کے جانے کے لیے آ

کچھ تو مرے پندار محبت کا بھرم رکھ

تو بھی تو کبھی مجھ کو منانے کے لیے آ

پہلے سے مراسم نہ سہی پھر بھی کبھی تو

رسم و رہ دنیا ہی نبھانے کے لیے آ

کس کس کو بتائیں گے جدائی کا سبب ہم

تو مجھ سے خفا ہے تو زمانے کے لیے آ

اک عمر سے ہوں لذت گریہ سے بھی محروم

اے راحت جاں مجھ کو رلانے کے لیے آ

اب تک دل خوش فہم کو تجھ سے ہیں امیدیں

یہ آخری شمعیں بھی بجھانے کے لیے آ

ویڈیو

 
انورادھا پوڈوال

انورادھا پوڈوال

نامعلوم

نامعلوم

اقبال بانو

اقبال بانو

شاہدہ منی

شاہدہ منی

مہدی حسن

مہدی حسن

آشا بھوسلے

آشا بھوسلے

رنا لیلیٰ

رنا لیلیٰ

حبیب ولی محمد

حبیب ولی محمد

RECITATIONS

مہدی حسن

مہدی حسن

احمد فراز

احمد فراز