رونق دامن صد چاک کہاں سے لائیں

شہر میں دشت کی پوشاک کہاں سے لائیں

حالت جذب میں ادراک کہاں سے لائیں

زہر کے واسطے تریاک کہاں سے لائیں

گرد ہائے خس و خاشاک کہاں سے لائیں

اس قدر گردش افلاک کہاں سے لائیں

پانی لے آئے ہیں اب ایک نئی الجھن ہے

کوزہ گر تیرے لیے خاک کہاں سے لائیں

چہرہ مہرہ تو بہرحال دمک ہی لے گا

تابش چشمۂ ناک کہاں سے لائیں

تجھ کو بالکل نہیں احساس ہنر اے دریا

اب ترے واسطے تیراک کہاں سے لائیں

خاک زادے ہیں سو بس ایک ہی رنگت ہے نصیب

خود میں صد رنگیٔ افلاک کہاں سے لائیں

ہم بھی جی بھر کے تجھے کوستے پھرتے لیکن

ہم ترا لہجۂ بے باک کہاں سے لائیں